سنت کا مقام

sunnah by mufti taqi usmani

سنت کا مقام

اللہ تعالیٰ نے جو نورانیت روحانیت اور دوسرے عجیب و غریب فوائد اتباعِ سنت میں رکھے ہیں وہ انشاء اللہ چھوٹی چھوٹی سنتوں پر عمل کرنے سے بھی حاصل ہوجائیں گے۔

حضرت مجدد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ کا ارشاد بار بار سننے کا ہے، فرماتے ہیں کہ:
’’اللہ تعالیٰ نے مجھے علوم ظاہرہ سے سرفراز فرمایا۔ حدیث پڑھی، تفسیر پڑھی، فقہ پڑھی، گویا تمام علوم ظاہرہ اللہ تعالیٰ نے عطا فرمائے، اس میں اللہ تعالیٰ نے مجھے کمال بخشا، اس کے بعد مجھے خیال ہوا کہ یہ دیکھنا چاہئے کہ صوفیاء کرام کیا کہتے ہیں ؟ ان کے پاس کیا علوم ہیں ؟ چنانچہ ان کی طرف متوجہ ہوکر ان کے علوم حاصل کئے۔ صوفیاء کرام کے جو چار سلسلے ہیں سہروردیہ، قادریہ، چشتیہ، نقشبندیہ، ان سب کے بارے میں دل میں یہ جستجو پیدا ہوئی کہ کونسا سلسلہ کیا طریقہ تعلیم کرتا ہے؟ سب کی سیر کی اور چاروں سلسلوں میں جتنے اعمال، جتنے اشغال، جتنے اذکار،جتنے مراقبات، جتنے چلے ہیں وہ سب انجام دیئے، سب کچھ کرنے کے بعد اللہ تعالیٰ نے مجھے ایسا مقام بخشا کہ خود سرورِ دوعالم ﷺ نے اپنے دستِ مبارک سے مجھے خلعت پہنایا، پھر اللہ تعالیٰ نے اتنا اونچا مقام بخشا کہ اصل کو پہنچا پھر اصل سے ظل کو پہنچا، حتی کہ میں ایسے مقام پر پہنچا کہ اگر اس کو زبان سے ظاہر کروں تو علماء ظاہر مجھ پر کفر کا فتویٰ لگادیں ، اور علماء باطن مجھ پر زندیق ہونے کا فتویٰ لگادیں ۔ لیکن میں کیا کروں کہ اللہ تعالیٰ نے مجھے واقعتا اپنے فضل سے یہ سب مقامات عطا فرمائے، اب یہ سارے مقامات حاصل کرنے کے بعد میں ایک دعا کرتا ہوں اور جو شخص اس دعا پر آمین کہہ دے گا، انشاء اللہ اس کی بھی مغفرت ہوجائے گی۔ وہ دعا یہ ہے کہ:
اے اللہ، مجھے نبی کریم ﷺکی سنت کی اتباع کی توفیق عطا فرما۔ آمین۔
اے اللہ، مجھے نبی کریم ﷺ کی سنت پر زندہ رکھ، آمین۔
اے اللہ مجھے نبی کریم ﷺ کی سنت ہی پر موت عطا فرما، آمین۔
سنتوں پر عمل کریں
بہرحال، تمام مقامات کی سیر کرنے کے بعد آخر میں نتیجہ یہی ہے کہ جو کچھ ملے گا وہ نبی کریم ﷺ کی سنت کی اتباع میں ملے گا۔ تو حضرت مجدد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ میں تو سارے مقامات کی سیر کرنے کے بعد اس نتیجے پر پہنچا، تم پہلے دن پہنچ جائو پہلے ہی دن اس بات کا ارادہ کرلو کہ نبی کریم ﷺ کی جتنی سنتیں ہیں ان پر عمل کروں گا، پھر اس کی برکت اور نورانیت دیکھوگے، پھر زندگی کا لطف دیکھو، یاد رکھو، زندگی کا لطف فسق و فجور میں نہیں ہے، گناہوں میں نہیں ہے۔ اس زندگی کا لطف ان لوگوں سے پوچھو، جنہوں نے اپنی زندگی کو نبی کریم ﷺ کے سنتوں پر قربان کردیا
مولانامفتی تقی عثمانی دامت برکاتھم

1 Star2 Stars3 Stars4 Stars5 Stars (No Ratings Yet)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *